'شہبازشریف کا نام ای سی ایل میں ڈالنے پر غور، چینی اسکینڈل کا فیصلہ ضرور ہو گا'

 

اسلام آباد (پبلک نیوز) وفاقی وزیراطلاعات شبلی فراز نے کہا ہے کہ ماضی میں کی گئی غیر قانونی بھرتیوں پر رپورٹ پیش کی گئی۔ رپورٹ نہ دینے والی وزارتوں کو ایک ہفتے کا وقت دیا گیا۔ کابینہ اجلاس میں میڈیاکے واجبات سے متعلق بریفنگ دی گئی۔ وزیراعظم نے عیدسے قبل میڈیاواجبات اداکرنے کی ہدایات کی۔

 

وفاقی کابینہ اجلاس کے بعد میڈیا بریفنگ دیتے ہوئے ان کا کہنا تھا کہ ایئرپورٹ کے انتظامات نجی شعبے کے حوالے کرنے پربات ہوئی۔ ایئرپورٹس کی آؤٹ سورسنگ سے متعلق خصوصی کمیٹی تشکیل۔ آوٹ سورسنگ کے قانونی معاملات30جون تک حل کیے جائیں۔ صوبوں میں پانی کی منصفانہ تقسیم کے لیے ٹیلی میٹری سسٹم لاناچاہتے۔

 

شبلی فراز نے کہا کہ اجلاس میں ہیلتھ کیئر کمیشن کے بورڈ ارکان کی منظوری دی گئی۔ ایل او سی پر بسنے والے شہریوں کے لیے خصوصی پیکج کی منظوری دے دی گئی۔ اجلاس میں زرعی شعبے کے لیے خصوصی پیکج کی منظوری دی گئی۔ کھادوں کی مدمیں37ارب روپے کی سبسڈی دی جائے گی۔ زرعی قرضوں پر واجب الادا سود میں کمی کے لیے 9ارب روپے رکھے ہیں۔

 

انھوں نے بتایا کہ کپاس کے بیجوں کی فراہمی کے لیے 2ارب30کروڑروپے رکھے۔ سستے ٹریکٹرکی فراہمی کے لیے 2ارب50کروڑروپے رکھے ہیں۔ شہبازشریف اپنی درخواست پر بلائے گئے اجلاس میں نہ آئے۔ شہبازشریف احتساب سے بچنے کے لیے نئے الیکشن کا ڈھونگ رچارہے ہیں۔ عوام اب کسی دھوکے میں نہیں آئیں گے، حکومت مدت پوری کرے گی۔ کسی کوبھی احتساب کے عمل سے بھاگنے نہیں دیں گے۔

 

وفاقی وزیراطلاعات کا کہنا تھا کہ شہبازشریف اور ان کے خاندا ن پر کرپشن کے الزامات ہیں۔ شہبازشریف نے الزامات کا جواب دینے کے بجائے الیکشن کا مطالبہ کردیا۔ شہبازشریف کا نام ای سی ایل میں ڈالنے کامعاملہ زیر غور ہے۔ چینی انکوائری کمیشن کی فرانزک رپورٹ جلد منظر عام پر آجائے گی۔ چینی اسکینڈل فیصلہ ضرور ہوگا۔ حکومت کو میڈیا ورکرز کی مشکلات کا ادراک ہے۔

احمد علی کیف  6 ماه پہلے

متعلقہ خبریں